جمعرات‬‮   29   فروری‬‮   2024
پاکستان سے رشتہ کیا     لا الہ الا الله
پاکستان سے رشتہ کیا                    لا الہ الا الله

مقبوضہ کشمیرمیں بھارتی مظالم کے خلاف اسلام آباد میں بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے احتجاجی مظاہرہ

       
مناظر: 942 | 5 Jan 2024  

 

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) بھارت کے غیر قانونی زیر تسلط جموں و کشمیر میں بھارتی قابض فوج کے مظالم کے خلاف کل جماعتی حریت کانفرنس آزاد جموں و کشمیرشاخ کے زیر اہتمام آج اسلام آباد میں بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کیاگیا ۔
کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق مظاہرے کی قیادت حریت کانفرنس آزاد کشمیر شاخ کے کنوینر محمود احمد ساغر نے کی۔ مظاہرے سے محمود ساغر سمیت حریت قائدین نے خطاب کرتے ہوئے شہدا کے مشن کوہر قیمت پر اسکے منطقی انجام تک جاری رکھنے کے کشمیریوں کے عزم اعادہ کیا۔ انہوں نے کہاکہ بھارت کشمیریوں کو اپنے ناقابل تنسیخ حق خودارادیت کے حصول کیلئے جدوجہد جاری رکھنے پر انکی منظم نسل کشی کر رہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ قابض بھارتی فوجیوں نے گزشتہ دنوں ضلع راجوری میں4کشمیریوں کو حراست کے دوران شہید جبکہ گزشتہ ایک ہفتے کے دوران محاصرے اور تلاشی کی کارروائیوں اور گھروں پر چھاپوں کے دوران سینکڑوں کو گرفتار کرلیاہے۔ انہوں نے کہاکہ بھارتی فوجی محاصرے اور تلاشی کی نام نہاد کارروائیوں کے دوران ڈرونز اور کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال کررہے ہیں ۔انہوں نے کہاکہ بھارت کشمیریوں کے قتل عام کے ذریعے مقبوضہ علاقے کی مسلم اکثریتی شناخت کو اقلیت میں تبدیل کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ مقررین نے کہاکہ مقبوضہ کشمیر کے عوام گزشتہ ساتھ دہائیوں سے زائد عرصے سے وحشیانہ بھارتی مظالم کا نشانہ بن رہے ہیں ۔انہوں نے مقبوضہ کشمیرمیں جاری انسانی حقو ق کی سنگین پامالیوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے عالمی برادری سے اپیل کی کہ وہ بھارتی فوجیوں کی طرف سے جاری انسانی حقوق کی پامالیاں بند کرانے کیلئے اپنا کردار ادا کرے ۔ حریت قائد ین نے واضح کیا کہ مسئلہ کشمیرحل کئے بغیر جنوبی ایشیا میں پائیدار امن وسلامتی کا قیام ممکن نہیں اور اس دیرینہ تنازعہ کا حل اقوام متحدہ کی قرار دادوں اور کشمیری عوام کی خواہشات میں مضمر ہے ۔ انہوں نے مقبوضہ جموں و کشمیر میں مسرت عالم بٹ کی سربراہی میں آزادی پسند تنظیم جموں وکشمیر مسلم لیگ اور تحریک حریت جموں وکشمیر جس کے بانی مرحوم سید علی گیلانی تھے ، کی پر امن سرگرمیوں پر پابندی عائد کرنے کے مودی کی فسطائی بھارتی کے حکومت کے فیصلے پر کڑی تنقید کی۔ انہوںنے کہاکہ اس اقدام کا مقصد اپنے ناقابل تنسیخ حق خودارادیت کے حصول کیلئے کشمیریوں کی جدوجہد کو دبانا ہے۔ انہوں نے اقوام متحدہ اور عالمی برادری پر زوردیا کہ وہ بھارت کو حق خودارادیت کا مطالبہ کرنے کشمیریوں کی جائیدادوں پر قبضے اوردیگر املاک کو ضبط کرنے سے روکے ۔انہوں نے کہا کہ اقوامِ متحدہ کے چارٹر کے مطابق ہر انسان کا پیدائشی حق ہے کہ وہ اپنے حقوق کیلئے آواز بلند کرے اور جموں و کشمیر کی آزادی پسند تنظیمیں اقوام متحدہ کے چارٹر کے مطابق اپنی قوم کے حق خودارادیت کیلئے پرامن جدوجہد کر رہی ہیں۔واضح رہے کہ بھارتی حکومت پہلے ہی جماعت اسلامی مقبوضہ جموں وکشمیر، ڈیمو کریٹک فریڈم پارٹی ،جموں و کشمیر لبریشن فرنٹ اور دختران ملت پر پابندی عائد کر چکی ہے ۔ اس موقع پر عالمی برادری سے پر زور اپیل کی گئی کہ وہ کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق مسئلہ کشمیر کا پرامن حل تلاش کرنے میں اپنا کردار ادا کرے۔ مقررین نے اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیموں پر بھی زور دیا کہ وہ بھارت اور مقبوضہ جموں و کشمیرکی جیلوں میں غیر قانونی طورپر نظربند حریت رہنمائوں اور کارکنوں کی حالت زار کا نوٹس لیں اور انکی جلد رہائی کیلئے اپنا کردار ادا کریں۔مظاہرے کے اختتام پر کشمیری شہد کی روح کے ایصال ثواب کیلئے خصوصی دعا کی گئیں۔ مقررین میں حریت رہنماء غلام محمد صفی، محمد فاروق رحمانی، عبدالرشید ترابی،سید یوسف نسیم، میر طاہر مسعو د، الطاف حسین وانی ،شیخ عبدالمتین، امتیاز وانی،سید فیض نقشبندی، محمد رفیق ڈار، ثنااللہ ڈار، شیخ محمد یعقوب، نثار مرزا، حسن البنا ، جاوید اقبال بٹ، حاجی سلطان بٹ، سید مشتاق، ، عدیل مشتاق وانی، عبدالمجید، محمد اشرف ڈار، شیخ عبدالمجید،سید اعجاز رحمانی، ایڈووکیٹ پرویز احمد، خو رشید احمد میر، راجہ خادم حسین، دائود یوسفزئی، راہی میر،سید مشتاق، مشتاق احمد بٹ، زاہد اشرف، محمد شفیع ڈار،گلشن احمد، شوکت حسین بٹ،منظور احمد ڈار، میاں مظفر، غلام نبی بٹ ،رئیس احمد میر، سید کفایت رضوی ،منظور احمدشاہ، مہر النسا، فضا ساجد، عابد رزاق عباسی، ساجد قریشی،امیتاز احمد بٹ، فاضل تبسم ،رشید شاہ ، ساجد قریشی ، افسر خان، ملک نعیم، قاضی محمد عمران اور زاہد صفی شامل تھے ۔