اتوار‬‮   14   اپریل‬‮   2024
پاکستان سے رشتہ کیا     لا الہ الا الله
پاکستان سے رشتہ کیا                    لا الہ الا الله

مقبوضہ کشمیرمیں گزشتہ 10برس کے دوران 418مرتبہ انٹرنیٹ سروسز معطل کی گئیں، رپورٹ

       
مناظر: 707 | 27 Dec 2022  

 

سرینگر(نیوز ڈیسک ) غیر قانونی طور پر بھارت کے زیر قبضہ جموں و کشمیر میںگزشتہ 10برس کے دوران مجموعی طورپر 418مرتبہ انٹرنیٹ سروسز معطل کی گئی ہیں۔
Internetshutdowns.in کی طرف سے جاری ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ مقبوضہ کشمیرمیں4اگست 2019کی شام کوسب سے طویل عرصے کیلئے انٹرنیٹ سروسز کو552 دنوں کے لیے بند کر دیا گیا تھاجب مودی حکومت نے اگلے دن مقبوضہ کشمیر کو دفعہ 370کے تحت حاصل خصوصی کو منسوخ کر دیاتھا۔مقبوضہ کشمیرمیں سب سے زیادہ 175مرتبہ ضلع پلوامہ میں انٹرنیٹ سروسز معطل کی گئیں۔ اگست 2019میں لداخ کے ضلع کارگل میں 145دنوں کیلئے انٹرنیٹ سروسز معطل کر دی گئی تھیں۔ اسلام آبادمیں 2012سے اب تک 142 مرتبہ انٹرنیٹ سروسز معطل کی گئیں جو کہ دوسری سب سے بڑی تعداد ہے ۔ کشمیر کے گرمائی دارالحکومت سرینگر میں اعداد و شمار کے مطابق مجموعی طورپر 132مرتبہ انٹرنیٹ بند کیاگیا۔ Internetshutdowns.inنے یہ اعدادوشمار خبروں یا انٹرنیٹ پر دستیاب متعلقہ ریاستی حکومتوں کی طرف سے جاری کئے گئے احکامات کے ذریعے اکٹھے کئے ہیں ۔تمام اعداوشمار کی سخت جانچ پڑتال کی گئی اور انٹرنیٹ کی معطلی سے متعلق حق اطلاعات کے تحت حاصل ہونے والی معلومات بھی ان اعدادوشمار میں شامل کی گئی ہیں ۔ معاشی طور پر بھی جموں و کشمیر سب سے زیادہ متاثرہ خطہ ہے ، جہاں 18 ماہ سے زیادہ عرصے تک انٹرنیٹ سروسز معطل رکھی گئیں۔ کشمیر چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹریز کی ایک رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ 5 اگست 2019 سے جولائی 2020تک تجارتی کمپنیوں کو 40ہزارکروڑ روپے سے زائد کا نقصان برداشت کرنا پڑا ۔اس عرصے کے دوران انٹرنیٹ سروسز کی معطلی کی وجہ سے سیاحت اور موبائل سروسز کے شعبے سب سے بری طرح متاثر ہوئے اور 4لاکھ96ہزار سے زائد افراد بے روزگارہو گئے۔